اندھیروں میں بھٹکنے والے

by Maryam
andhero mein bhatakny wale

اندھیروں میں بھٹکنے والے
منزل کا جب نشاں پاتے ہیں
محرک ہو کر قدم بقدم
پھر ہاتھ سے ہاتھ ملاتے ہیں
خدا پر ایماں رکھنے والے
خود پہ بھی گماں پاتے ہیں
انسِ بشر شیوۂ پیغمبری ہے
محبِ آدم،فلاح پاتے ہیں
بہادر، نڈر، بے باک سپاہی
کامیابیوں کوسایۂ فگن پاتے ہیں
قافلہ در قافلہ، صف بندی کرنے والے
اپنے سبھی راستے آسان پاتے ہیں
موجِ لہربننا، اپنی ہی رو میں بہنا
ایسے دریا سمندر کا سراغ پاتے ہیں
گگن کو چھونا، فضاؤں کو سراہنا
ایسی شاہیں پرواز پاتے ہیں

Related Posts